مضامین

ایقان …. مضمون ….. اکرم جاذب

Spread the love




سب سے پہلے پیارے بھائی نعیم رضا بھٹی کو ان کی غزلیات پر مشتمل اوّلین شعری مجموعہ "ایقان” کی اشاعت پر مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ ڈھیر ساری نیک تمنائیں اور دعائیں اس نوجوان اور خوبصورت شاعر کےلئے ۔ بلاشبہ ایقان بہت عمدہ اور پیاری کتاب ہے ۔ جابجا تازگی اور تازہ کاری کا احساس ہوتا ہے ۔ ایک سوبارہ صفحات پر مبنی کتاب کو انحراف پبلیکیشنز نے شائع کیا ہے ۔ معروف شاعر جناب ڈاکٹر خورشید رضوی کے علاوہ فرزاد علی زیرک کا مفصل مضمون جو ایقان کی شاعری کا بھرپور تجزیہ کرتا ہے ، کتاب کا حصہ ہے۔
نعیم رضا بھٹی اول و آخر شاعر ہیں ۔ شعر و ادب کے ساتھ ان کی لگن محتاجِ بیان نہیں۔ دامنِ دل کشادہ رکھنے والے انسان ہیں ۔ خود کو جھوٹی اناؤں کے حصار میں بند نہیں کرتے، رابطہ رکھنے پر یقین رکھتے ہیں ۔
میں ان کی کتاب ”ایقان“ کے بارے مزید کچھ عرض کرنے سے پہلے غزل کے حوالے سے چند باتیں آپ کے گوش گزار کرنا چاہوں گا ۔
غزل خوبصورت صنفِ شاعری ہے اور اس میں قدیم روایاتی علامات ، استعاروں، تشبیہوں یا تلمیحات وغیرہ کو غیر روایتی معنی دینے کی ہمیشہ کوشش کی جاتی رہی۔ یوں قدیم روایت کے ملے جلے اثرات شعوری یا غیر شعوری طور سے جدید غزل میں بھی سرایت کرتے گئے ۔ مضامین کے اعتبار سے بھی دیکھا جائے تو غزل خاص و عام کی دلچسپی کا ذریعہ رہی ہے۔ فنی و معنوی نقطہ نظر سے بھی غزل کا مقام اعلیٰ ہے ۔ جذبات و احساسات کا سمندر بھی ہے۔ یہاں سماج کی بات بھی کی جاتی ہے اور امکانات کی وادی ء رنگا رنگ کی سیر بھی کرائی جاتی ہے۔ حالی نے مقدمہ ء شعر و شاعری میں غزل کے لئے ہر مضمون کی گنجائش پیدا کر دی ہے ۔ اب غزل کا کینوس بہت وسیع ہے ۔ غزل صنفِ سخن ہی نہیں معیارِ سخن بھی ہے۔ اس کے آنگن میں ہمیشہ دھوپ ہی دھوپ کھلی ہے۔
اگرچہ غزل بنیادی طور پر ایک انفرادی فنکارانہ عمل ہے ، لیکن اس کے جذبات کی عمومیت مسلم ہے جو سرشتِ انسانی کی وحدت اور جبلتوں پر مشتمل ہے۔ یہ عمومیت ماضی ، حال اور مستقبل تینوں زمانوں کا احاطہ کرتی ہے۔ غزل اشاروں اور کنایوں میں بات کرتی ہے۔ اس کا لہجہ دھیما ہے اور یہی اسے راس ہے ۔ ایک آنسو ہے پلکوں پہ ٹھہرا ہوا۔۔ ایک تبسم ہے ہونٹوں پہ پھیلا ہوا۔۔ رمزیت اور ایمائیت ہی وہ اجزاء ہیں جو غزل کی جاذبیت کا باعث ہیں۔
نعیم رضا بھٹی کی غزل بھی اس رمز سے آشنا ہے۔ لفظیات یا موضوعات کے اعتبار سے ان کا کلام منفرد ہے ۔ ظاہر ہے یہ انفرادیت یونہی حاصل نہیں ہوجاتی۔ بہت سی وقتی لہروں اور باتوں سے صرف ِ نظر کرنا ہوتا ہے۔ یقینا وسیع مطالعہ اور غور و خوض سے ہی یہ راہ نکلتی ہے ۔

پیڑ کو چھوڑ اپنی چھاؤں بنا
کام مشکل نہیں تو ڈر سے نکل

غزلیہ اشعار میں بے ساختگی سے جو حسن اور خوبی در آتے ہیں وہ تکلف و تصنع یا مشق کے بس کی بات نہیں ۔ نعیم کا مصرع مصرع اسی بے ساختگی سے عبارت ہے۔

کورا ہونے سے پیشتر میں نے
ایک اک رنگ اختیار کیا

ایقان کا مطالعہ کرتے ہوئے کہیں بھی غیر ضروری ثقالت یا بے جا تراکیب سے واسطہ نہیں پڑتا۔ بہت سادگی سے گہری بات کہہ جاتے ہیں ۔ یوں تو ایقان کے ہر صفحے پر آبدار موتی بکھرے پڑے ہیں مگر یہاں آپ کی لطفِ طبع کےلئے چند اشعار حاضر ہیں۔

سانس بے ربط ہو تو لگتا ہے
جلتا بجھتا ہوا دیا ہوں میں

سب سے عمدہ پھول ہو تم
دنیا کے گلدستے میں

سبھی سے اپنے تئیں رسم و راہ رکھتی ہے
سمے کی آنکھ شریعت کی پاسدار نہیں

داستاں میں قہقہہ دانستہ تھا
یوں منائی ہار جانے کی خوشی

کون کہتا ہے کہ پانی کے سبب زندہ ہیں
ہم تو بس جلتی کہانی کے سبب زندہ ہیں

خدائے خواب خیمہ زن تھا آنکھ میں
سو دل چٹخ رہا تھا خواب میں

ایک مقتول کی گواہی سے
بچ گئے ہم بڑی تباہی سے

ہر طرف ہے مبالغہ میرا
میں نے مٹھی میں آسمان لیا

مخاصحت کو پچھاڑا گلہ تمام کیا
جدید عہد کی منطق کا احترام کیا

نعیم رضا بھٹی کے ہاں رومانس کی فضا پُر شور نہیں۔ وہ گھائل ہو کر بھی بے نیازی سے اپنی راہ چلتا جاتا ہے ۔ ایک دھیمی مسکراہٹ اس کی آنکھوں سے جھانکتی ہے ۔ میں نے بہت کم لوگ دیکھے ہیں جو زندگی کی مختلف جہتوں اور پہلوءوں کو ایسے مثبت انداز میں دیکھتے اور پرکھتے ہیں ۔ بھٹی صاحب خوش بین ہیں تو خوش بیان کیسے نہ ہوں۔ ممکنات کے اس سفر میں نئی راہوں کی تلاش انہیں ہمیشہ رہے گی وہ مطمئن ہو کر بھی مطمئن نہیں ہونے والے ۔
وہ ابھی نوجوان ہیں ۔ راہِ شعر و ادب میں ابھی طویل سفر ان کا منتظر ہے ۔ مجھے رتی برابر شبہ نہیں کہ وہ صاحبِ اسلوب بھی ہیں اور ان کا لہجہ بھی خالصتاً اپنا ہے۔ یقیناً یہ بڑی خوشی کی بات ہے ایقان ان کے فنی کیرئیر کا پہلا پڑاؤ بھی ہے اور ایک شاندار مستقبل کی نوید بھی ۔
انہیں کتاب کی اشاعت پر ایک بار پھر مبارکباد
علامہ اقبال کے اس شعر کے ساتھ اجازت۔۔۔۔۔

ہر اک مقام سے آگے مقام ہے تیرا
حیاتِ ذوقِ سفر کے سوا کچھ اور نہیں

بہت شکریہ

(اکرم جاذب)




جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے