شاعری غزل

خموش لب ہیں جھکی ہیں پلکیں، دلوں میں اُلفت نئی نئی ہے ….. شبینہ ادیب کانپوری

Spread the love

خموش لب ہیں جھکی ہیں پلکیں، دلوں میں اُلفت نئی نئی ہے
ابھی تکلف ہے گفتگو میں، ابھی محبت نئی نئی ہے

ابھی نہ آئے گی نیند تمکو، ابھی نہ ہمکو سکوں ملے گا
ابھی تو دھڑکے گا دل زیادہ، ابھی یہ چاہت نئی نئی ہے

بہار کا آج پہلا دن ہے، چلوچمن میں ٹہل کے آئیں
فضا میں خوشبو نئی نئی ہے، گلوںمیں رنگت نئی نئی ہے

جو خاندانی رئیس ہیں وہ مزاج رکھتے ہیں نرم اپنا
تمہارا لہجہ بتا رہا ہے تمہاری دولت نئی نئی ہے

ذرا سا قدرت نے کیا نوازا، کہ آ کے بیٹھے ہو پہلی صف میں
ابھی سے اڑنے لگے ہوا میں، ابھی تو شہرت نئی نئی ہے

بموں کی برسات ہو رہی ہے،پُرانے جانباز سو رہے ہیں
غلام دُنیا کو کر رہاہے، وہ جسکی طاقت نئی نئی ہے

شبینہ ادیب کانپوری



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے